Umera Ahmed Biography Urdu English Versions Famous Writer

0
500
Umera Ahmed Biography Urdu English Versions

Umera Ahmed

Umera Ahmed, Umera Ahmad, Umaira Ahmad and Umaira Ahmed also different spelling used on the internet.

Below we are providing biography Umera Ahmed written by herself in English as well as Urdu language for easy understanding.

My name is Umera Ahmed and this is a biography of my life. I wanted to give my fans an inside look on my life. I have written so many stories that I feel it’s time to write my own story. Since very little is known about me, I want to give new fans a chance to know who I am.

میرا نام عمیرا احمد ہے۔ اور یہ میری سوانح حیات ہے۔ میں یہ چاہتی تھی کہ میرے چاہنے والوں کو میری زندگی کے اندرونی حالات کا پتہ چلے۔ میں نے اتنی زیادہ کہانیاں لکھ لی ہیں کہ میرے خیال میں اب وقت ہے کہ میں اپنی کہانی لکھوں۔ اس لئے کہ لوگوں کو میرے بارے میں بہت کم ہی پتا ہے۔ میں اپنے نئے چاہنے والوں کواپنے بارے میں چاننے کا ایک موقع دینا چاہتی ہوں۔

Umera Ahmed Early Days

I was born on December 10, 1976. I was born in Sialkot Pakistan. In case you’re wondering, I didn’t just wake up and decide to be a writer. Writing is as natural to me as breathing. It was always a dream of mine to become a novelist so I worked at it. I never thought I would become a famous novelist at such a young age. I went to school to learn my craft. I went to Murray College in Sialkot and got my Master’s degree in English Literature. An interesting fact about me is that even though I have a Master’s degree in English Literature, I am able to write in Urdu language. It’s my native language so I wanted to write Urdu novels.

میں 10دسمبر، 1976کو سیالکوٹ میں پیدا ہوئی۔ اگر آپ سوچ رہے ہیں کہ میں جاگی اور میں نے لکھنا شروع کردیا تو یہ کچھ غلط بھی نہیں ہے۔ کیونکہ لکھائی میرے لئے اتنی ہی قدرتی ہے جتنا کہ سانس لینا۔ میرا ہمیشہ سے خواب تھا کہ میں ناول نگار بنوں اور میں نے اس کے لئے پوری کوشش کی۔ میں نے کبھی بھی نہیں سوچا تھا کہ میں اتنی کم عمری میں ایک مشہور ناول نگار بن جاوں گی۔ میں سکول گئ اور میں نے اس فن میں مہارت حاصل کی۔ میں نے مرے کالج سیالکوٹ سے ایم اے انگلش کی ڈگری لی۔ اور یہ ایک دلچسپ حقیقت ہے کہ باوجود ایم اے انگلش کے میں اردو میں ناول لکھنے کے قابل ہوئی کیونکہ یہ میری قومی زبان ہے اورمیں نے چاہا کہ اردو ناولز ہی لکھوں۔

I was fortunate that the first story I sent to a magazine was published right away. My first publication was Zindagi Gulzar Hai. In 1998, I sent this article to a monthly digest. They enjoyed it so much that they wanted me to write a full length novel based on it. I didn’t think much would come of this article, but it became a hit. I just wanted to submit it to see if I had what it took to become a writer. I wrote other stories for this digest which helped lead to my writing career.

میرے خوش قسمتی سے جو پہلی کہانی میں نے میگزین کو بھیجی وہ فوراََ چھپ گئی۔ میری پہلی کتاب زندگی گلزار ہے تھی۔1998 میں میں نے مضمون ایک ماہانہ رسالے کو بھیجا ۔انہوں نے اسے بہت پسند کیا اور اس پر ایک پورا ناول لکھنے کو کہا۔ مجھے نہیں پتا تھا کہ یہ مضمون اتنا مقبول ہوگا۔ لیکن یہ بے پناہ مقبول ہوا۔ میں نے تو صرف چیک کرنے کے لئے کہ میں لکھ بھی سکتی ہوں کہ نہیں یہ مضمون بھیجا لیکن اس طرح میری ناول نگاری کاسفر شروع ہوگیا۔

Umera Ahmed Eduation

In my career, I was an English teacher at Army Public College in Sialkot. English isn’t my first language, but I mastered it enough that I could teach it to students. Even though I enjoyed the job, I quit to devote my time to my writing. It was calling out to me and I had to answer the call. I remained devoted to my writing and it was a wise decision for me. I never looked back once I decided to devote my time to writing.

میں سیالکوٹ میں آرمی پبلک سکول میں ٹیچر تھی۔ میں نے انگلش بہت اچھی کرلی اور طالب علموں کو پڑہاتی رہی۔ آخر کار یہ نوکری چھوڑ دی تا کہ میں ناول نگاری کو پورا وقت دے سکوں۔ کیونکہ یہ فن مجھے بلا رہا تھا اور مجھے اس کی آواز پر لبیک کہنا تھا۔ میں نے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا اور پوری تندہی سے اس کام میں جُت گئی۔

Why Umera Ahmed Wrote Novels

In case you are wondering what inspires me to write, I write based on life experiences. I believe there is a story everywhere. I am also inspired to write because I am able to be creative and have been given opportunities in my field to write. I am a fiction writer, but I enjoy being called a philosopher. I love giving advice on relationships. I write what I want to write and I am happy that my fans accept it. It led me to write different novels.

اگر آپ یہ سوچ رہے ہیں کہ مجھے کیا چیز لکھنھے پر مجبور کرتی ہے تو یہ زندگی کے تجربات ہے۔ میرا یقین ہے کہ ہر طرف ایک کہانی موجود ہے۔ میں اس لئے بھی لکھتی ہوں کیوں کہ میں سوچ سکتی ہوں اور میرے خیالات کی پرواز بلند ہے۔ مجھے رشتوں کے بارے میں نصیحت کرنے کا شوق ہے۔ مجھے جو اچھا لگتا ہے میں وہ لکھتی ہوں اور مجھے بہت خوشی ہے کہ لوگ اسے پسند کرتے ہیں۔ بس اس طرح میں مختلف ناول لکھتی گئی۔

Literary Work of Umera Ahmed

I have written 16 books so far in my career. If you are not familiar with my books, you may be familiar with the plays that have been written based on my books. I have also written scripts for dramas. My novels and plays have been turned into TV programs which is a wonderful accomplishment for me. I am amazed at how much people can relate to my characters. I like to write hidden messages in my stories. I love to leave my readers thinking. I enjoy giving my fans food for thought.

میں نیں آج تک (انٹرویو کے دن تک) 16 کتابیں لکھی ہیں۔ اگر آپ میرے ناولز کو نہیں جانتے تب بھی آپ ان ڈراموں سے تو ضرور واقف ہوں گے جو ان ناولز پر بنے ہیں۔ میرے ناولز پر ڈرامے بنے یہ میرے لئے بڑے اعزا ز کی بات ہے۔ مجھے یہ بہت اچھا لگتا ہے کہ لوگ کس طرح میرے کرداروں میں خود کو تلاش کرتے ہیں۔ میں اپنی کہانیوں میں خفیہ پیغام دینا پسند کرتی ہوں۔ اور مجھے یہ اچھا لگتا ہےکہ پڑھنے والے سوچتے رہ جائیں۔ اپنے قارئیں کو سوچنے پر مجبور کرنا مجھے پسند ہے۔

Famous Urdu Novels of Umera Ahmed

Some of my successful novels are Meri Zaat Zarra-e-Benishan, Daam, Doraha, Uraan, Behadd, Sauda, etc. My most popular book is Peer-e-Kamil (urdu) Peer e Kamil ((English). I have received great praise with this novel.

میرے مشہور ترین ناول، میری زات زرہ بے نشان، دام، ، دوراہا، اڑان، ، بے حد، ، سودا، وغیرہ ہیں۔ میری سب سے مشہور کتاب پیرِکامل ہے۔ اور اس ناول کی وجہ سے مجھے بے پناہ عزت افزائی ملی۔

I have been blessed to win awards for my work. One of the awards that I have won is for best writer. I won this award for the drama series “Meri Zaat Zarra-e-Benishan”. This show is very popular and I am thankful for that. It airs in different countries in the world.

مجھے اپنے کا م پر بہت سے ایوارڈ بھی ملے ہیں۔ مجھے بیسٹ رائٹر کا ایوارڈ بھی ملا ہے۔ یہ ایوارڈ مجھے ڈرامہ سیریل میری زات زرہ بے نشان کے لئے ملا۔ یہ ڈرامہ بہت مشہور ہوا اور دنیا کے مختلف ملکوں میں چلا۔

My work has become very popular in India. The shows are “Zindagi Gulzar Hai”, “Maat”, and “Behadd”. I wrote these shows based on relationships between men and women. The relationships between men and women have always intrigued me. These relationships are inspirational to me. The situations between men and women inspire me to want to write for them. The irony is that I am not a romantic person despite the way I write my characters.

میرے کچھ ڈرامے تو انڈیا میں بھی بہت مقبول ہوئے جن میں زندگی گلزار ہے، مات، اور بے حد شامل ہیں۔ ان ڈراموں میں میں نے عورت اور مرد کے تعلق کے بارے میں لکھا ہے۔ یہ تعلقات مجھے ہمیشہ سے کچھ کھنے پر مجبور کرتے ہیں باوجود اس کے کہ میں خود کو رومانس سے عاری محسوس کرتی ہوں۔ یہ ایک عجیب بات ہے کہ میں نے اتنے رومانوی کردار تخلیق کئے ہیں۔

Umera Ahmed Marriage

For those of you who may not know, I am a married woman. I married a wonderful man named Arsam Aftab. I am a private person so I didn’t want to have a big and lavish wedding. The only people I had in attendance at my wedding are people who are close to me. My wedding didn’t stay private for long because it spread through social media like wildfire

میں ایک شادی شدہ عورت ہوں اور میری شادی ارسم آفتاب سے ہوئی۔ میں نے شادی کی بہت دھوم دھام نہیں کی۔ لیکن سوشل میڈیا کی وجہ سے یہ بات ہر طرف جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔

I am currently writing my first Urdu feature film. I am still willing to work in India, but I can’t work there as much. I’m still working on two drama series and will continue to write a novel a year.

English Source

میں اپنی پہلی اردور فیچر فلم لکھ رہی ہوں۔ انڈیا میں بھی کام کرنا چاہتی ہوں لیکن مصروفیات اس بات کی اجازت نہیں دیتیں۔ میں دو ڈرامہ سیریل پر کام کر رہی ہوں اور اس سال میرا ایک اور ناول بھی آجائے گا۔

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.